دھوپوں میں غم ذات کی جھلسایا ہوا سا

Ghazal : Dhoopon men gham zaat ki jhulsaya hua sa

  

دھوپوں میں غم ذات کی جھلسایا ہوا  سا

ہر پیکر احساس ہے مرجھایا ہوا  سا

 

ہو ہر شخص ہے تشکیک کے آسیب کے
ہاتھوں

سہما ہوا  ، سمٹا  ہوا  ،  گھبرایا  ہو ا سا

 

ہر ذہن جو فردوس تخیل تھا کسی دن

 لگتا ہے جہنم کوئی دہکایا ہوا سا

 

صدیوں سے میں جینے کی سزا کاٹ رہا
ہوں

سانسوں کی صلیبوں  پہ ہوں لٹکایا ہوا  سا

 

ہر شخص ہے بے مہرئی حالات سے ہر دم

روٹھا ہوا ،بپھرا ہوا ، جھلایا ہوا

 

صحرائوں میں نفرت کے بھٹکتا ہوں
مسلسل

دو گھونٹ کو چاہت کے ہوں ترسایا
ہوا سا

 

کیا پائے گا پھر وسعت افکار کہ
راہیؔ

روٹی کے جھمیلوں میں ہی الجھایا ہوا سا

Leave a comment