شہر میں اک مرد وحشت آشنا

 

Ghazal : Shaher men ek mard wahshat aashna

 

شہر میں اک مرد وحشت آشنا

ڈھونڈتا ہے کوئی صورت آشنا

 

کھونہ اپنی بات کا ناحق بھرم

کون ہے کس کا مصیبت آشنا

 

سنتے ہیں وہ بھی منافق ہو گیا

تھا ابھی تک جو صداقت آشنا

 

اجنبی لگتا ہے جس کو دیکھئے

 یوں تو ہے ہر ایک صورت آشنا

 

مجھ سے وابستہ ہر ہر کرب حیات

میں ازل سے ہوں اذیت آشنا

 

کھردرے لفظوں سر زخمی ہوگئی

کہ تھی زباں اپنی فصاحت آشنا

 

کون ہے گمنام راہی ؔ کی طرح

 کون ہے اس جیسا شہرت آشنا

Leave a comment